24 February 2024
  • 6:16 am ‘How is this Naya Kashmir?’ Why end of term of panchayats worsens anxieties about Delhi rule
  • 1:06 am Zhalay Sarhad’s comments on marriage go viral
  • 12:48 am Horrific: Man shot, stabbed by his four friends
  • 12:47 am ‘Suits’ sets new streaming record in 2023
  • 12:37 am Three coordinated attacks thwarted in Balochistan’s Mach: Jan Achakzai
Choose Language
 Edit Translation
My-Ads
Spread the News

بارشوں کے باعث سندھ کے 9 اضلاع میں آثارقدیمہ کے 18 مقامات کوبھی نقصان پہنچا ہے۔

سیلاب اور بارشوں سے متاثرہ آثارقدیمہ کے مقامات کی مرمت کیلئےٹھیکیداروں کو بغیر ٹینڈر کام کرنےکی پیشکش کی گئی ہے۔

محکمہ آثار قدیمہ کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ حیدرآباد کا پکاقلعہ،میاں غلام شاہ کلہوڑو،میاں غلام نبی کلہوڑوکےمقبرےمتاثر ہوئے ہیں۔

بارشوں سےٹنڈوفضل کےقدیمی مقبروں اورمسجدوں کوبھی نقصان پہنچا ہے۔ کوٹ ڈیجی کا قلعہ،مومل کی ماڑی، بھنبھور، سکھرکاساتواں آستانہ بھی متاثرہوا ہے۔

اس کےعلاوہ آمری میوزیم، رنی کوٹ کے آثارقدیمہ اور خدا آباد کی جامع مسجد میں بھی دراڑیں پڑگئی ہیں۔

سیکریٹری آرکیالوجی نے بتایا ہے کہ ان مقامات کی مرمت کیلئے سیپرا قوانین پر عمل کریں گے تو دیرہوجائےگی۔

Abdul Gh Lone

RELATED ARTICLES